ایل ڈی اے سٹی کے لئے10 ہزار کنال اراضی پیش کر دی گئی‘
Share :



ایل ڈی اے سٹی کے لئے10 ہزار کنال اراضی پیش کر دی گئی‘آٹھ ہزار کنال کا قبضہ حاصل کر لیا گیا‘ دو ہزار کنال پر ترقیاتی کام جاری ہیں

 ڈویلپمنٹ پارٹنرز کے بعد باقی اراضی خود ایکوائر کرنے کے لیے ایک ارب روپے مختص کیے جا رہے ہیں

 لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی کی ڈائریکٹر جنرل آمنہ عمران خان نے کہا ہے کہ ایل ڈی اے سٹی پر پیش ر فت حوصلہ افزا ہے۔ ترقیاتی کاموں کے لئے بڈنگ کا عمل جلد از جلد کر کے سکیم کو فاسٹ ٹریک پر مکمل کیا جائے۔گزشتہ روز سکیم سے متعلقہ اجلاس کے دوران انہیں بتایا گیا کہ ایل ڈی اے سٹی فیز ون کے لیے درکار13ہزار کنال میں سے 10ہزار کنال ایل ڈی اے کو پیش کی جا چکی ہے جس میں سے آٹھ ہزار کنال کا قبضہ حاصل کر لیا گیا ہے۔ سکیم کے فیز ون کے لئے باقی تین ہزار کنال اراضی حاصل کرنے کے لیے کوششیں تیز کر دی گئی ہیں۔

ڈویلپمنٹ پارٹنرز کی طرف سے اراضی کی فراہمی ختم ہونے کے بعد باقی ماندہ اراضی ایل ڈی اے خود ایکوائر کرے گا جس کے لئے پی سی ون میں ایک ارب روپے مختص کیے جا رہے ہیں۔قبل ازیں ایل ڈی اے سٹی کی سپروائزری کمیٹی کا اجلاس ایڈیشنل ڈائریکٹرجنرل(اربن پلاننگ)رانا ٹکا خان کی زیر صدارت منعقد ہوا۔اجلاس کو بتایا گیا کہ لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی کی گورننگ باڈی نے ایل ڈی اے سٹی میں ایک ارب20کروڑ روپے کی لاگت سے ترقیاتی کام شروع کرنے کی منظوری دے دی ہے اورایل ڈی اے سٹی میں دو ہزار کنال سے زائد اراضی پر ترقیاتی کام شروع کر دیئے گئے ہیں جنہیں تین ماہ میں مکمل کرنے کا ہدف مقرر کیا گیا ہے۔ 13ہزار کنال پر مشتمل ڈویلپمنٹ ایریا ون کے باقی حصے میں ترقیاتی کام کرنے کے لئے پی سی ون تیار کر لیا گیا ہے۔ ایل ڈی اے کی گورننگ باڈی کی طرف سے جلد ہی اس کی منظوری کے بعد باقی کام کے لئے ٹینڈر بھی طلب کر لئے جائیں گے۔ کنٹریکٹرز سپریم کورٹ کی طرف سے دی گئی ٹائم لائن کے اندر اندر ترقیاتی کام مکمل کرنے کے لئے تمام ذرائع اور وسائل بروئے کار لا رہے ہیں۔ موضع سدھڑ میں واقع سکیم کے سیکٹر فائیو کی تعمیر شدہ سڑکوں پر اسفالٹ کا کام جون تک مکمل کر لیاجائے۔رانا ٹکاخان نے ہدایت کی کہ ڈویلپمنٹ ایریاون میں بلائنڈ کرکٹ سٹیڈیم کے قریب سکیم کی مرکزی جامع مسجد کی تعمیر کاکام فی الفور شروع کیاجائے۔ملاقات کرنے والوں میں اے کے بی کنٹریکٹر کے عالم خان،پاک اسٹیٹ کے عمران علی بھٹی‘ اربن ڈویلپرز کے طارق جاوید‘الفا اسٹیٹ کے راحیل شہزاد اور منیجر ظفر محمود چشتی شامل تھے- 

 
TOP